زوالِ نعمت کے اسباب


جریدہ “الواقۃ” کراچی، شمارہ 14، رجب المرجب 1434ھ/مئی، جون 2013

زوالِ نعمت کے اسباب

شیخ الاسلام حافظ ابن القیم الجوزیة رحمہ اللہ کی مایہ ناز تصنیف “ تفسیر المعوذتین “ سے ماخوذ

ترجمہ  :  مولانا عبد الرحیم پشاوری

معاصی اور سیئات کے ارتکاب میں اگر چہ بظاہر لذت محسوس ہوتی ہے اور اس سے نفس کو فوری خوشی حاصل ہوتی ہے لیکن اس کی مثال ایک لذیذ کھانے کی ہے جس میں زہر ملایا گیا ہو ۔ بظاہر وہ نہایت مرغوب ہوتا ہے ، مگر اس کا انجام کھانے والے کی ہلاکت ہے ذنوب اور معاصی بھی اسی لذیذ مگر مسموم کھانے کی طرح عقوبت اور عذاب کے موجب ہیں اور وہ گناہ اور عذاب میں سبب اور مسبب کا تعلق ہے اگر بالفرض شریعت مطہرہ نے آدمی کو اس کی عقوبت اور انجام بد سے آگاہ نہ کیاہوتا تو تب بھی ایک صاحب بصیرت انسان ، تجربہ کے ذریعے سے اور واقعات عالم سے استدلال کر کے اسی نتیجہ پر پہنچتا ۔کیوں کہ جب کبھی بھی کسی سے کوئی نعمت زائل ہوتی ہے اس کا
سبب یقینا اللہ تعالیٰ کے احکام کی نافرمانی ہو گا۔ ارشاد الہٰی ہے کہ 

( اَنَّ

اﷲَ لَا یُغَیِّرُ مَا بِقُوْمٍ حَتّٰی یَغَیُّروَا مَا بِاَنْفُسِھِمْ ط وَ اِذَ 

اَرَادَاﷲُ بَقَوْمٍ سُوْئً فَلَا مَرَدَّلَہ وَ مَالَہمْ مِّنْ دُوْنِہ مِنْ 

وَّالٍ )

 “ 

بے شک اللہ تعالیٰ کسی قوم کی اچھی حالت کو بری حالت سے تبدیل نہیں فرماتا جب تک 

وہ خود اپنے اعمال میں تبدیلی پیدا نہ کرلیں اور جب اللہ تعالیٰ کسی قوم پر عذاب 

نازل فرمانا چاہتا ہے تو پھر کوئی بھی اس کو ٹال نہیں سکتا اور نہ سوائے اس کے 

کوئی اور ان کے لیے کارساز ہو سکتا ہے ۔”3 reasons-for-decline-the-blessingPDF download link 

زوال نعمت کے اسباب
اللہ تعالیٰ کے کلام پاک میں جن قوموں کی ہلاکت اور ان پر نزول عذاب کا ذکر ہے ۔ اگر کوئی سمجھ دار آدمی ان قصص کو غور سے پڑھے تو ان کو واضح طور پر نظر آجائے گا کہ ہر ایک قوم کی ہلاکت اور عذاب کا سبب اس قوم کی نافرمانی تھی۔اسی طرح اگر کوئی تاریخی واقعات یااپنے زمانہ کے احوال پر ایک نظرغائر ڈالے تو اس کو نظر آئے گا کہ زوال نعمت کا اصلی اور حقیقی سبب اللہ تعالیٰ کی اور اس کے رسولوں کی نافرمانی ہے ۔ ایک شاعر نے اس مضمون کو نہایت خوبی کے ساتھمنظوم کیا ہے ۔ 

اِذَا کُنْتَ فِیْ نَعْمَةٍ فَارِعْھَافَاِنَّ الْمَعاصِیْ تَزِیْلُ النَّعَم

 

“ 

جب تم پر اللہ تعالیٰ کی نظر عنایت ہو اور تم کسی نعمت کا لطف اٹھارہے ہو تو اس کو 

محفوظ رکھنے کی کوشش کرو (اللہ تعالیٰ کی نافرمانی نہ کرو ) کیونکہ اللہ تعالیٰ کی 

نافرمانی اس کی نعمتوں کے سلب کیے جانے کا سبب ہے ۔”

اللہ تعالیٰ کی نعمت کو برقرار رکھنے کا سب سے بہتر طریقہ اللہ تعالیٰ کے احکام کی پابندی ہے اس نے اپنے کلام مجید میں شکر کو زیادتی کا موجب بتایا ہے لیکن کیا تم جانتے ہو کہ صرف زبانی الحمدللہ کہنے سے شکر گزاریکا حق ادا ہو جاتا ہے ؟ نہیں ہر گز نہیں ، شکر کی حقیقت یہ ہے کہ انسان اللہ تعالیٰ کی عطا کی ہوئی نعمتوں کو اس کی اطاعت میں صرف کرے ۔

شرکا مفہوم

خلاصة الکلام یہ ہے کہ معاصی اور سئیات جو دنیا اور آخرت میں عقوبت اور عذاب کا موجب ، عذاب کا سبب ہونے کے باعث شر کے مفہوم میں داخل ہیں ۔ باقی رہا اس کا مسبب یعنی عقوبت اور عذاب ، سو اس کا شر کے مفہوم میں داخل ہونا بالکل ظاہر ہے، کیوں کہ اس کی عقوبت جسمانی اور روحانی دونوں قسم کے شدید ترین عذاب پر مشتمل ہے ۔ روحانی عذاب سے مراد شرمندگی کا احساس ، سخت ندامت اور حسرت ہے ۔
اگر ایک عقلمند اس کی نوعیت پر کماحقہ غور کرے تو یقینا اس کے اسباب سے پرہیز کرنا وہ اپنا اول ترین فرض خیال کرے گا لیکن اصل یہ ہے کہ آدمیوں کے دل پر غفلت کے پردے پڑے ہوئے ہیں اور اگر ان کو حقیقت حال پر اطلاع ہوتی تووہ ایسی باتوں کا ہرگز ارتکاب نہ کرتے جن کے سبب سے وہ نجات سے محروم رہیں یا دنیا اور آخرت کے درجات سے بے بہرہ ہوں ۔ آخرت میں جب انکشاف حقیقت ہوگا تو گنہگار اور مجرم چیخیں مارمار کر پکارے گا  یا لیتنی قدمت لحیانی (کاش میں اپنی اس ابدی زندگی کے لیے بھی کچھ ذخیرہ کرتا ) یا حسرتا علی مافرطت فی جنب اﷲ ۔ ہائے افسوس ! میں نے اللہ تعالیٰ کے پہلو میں (اس کی آنکھوں کے سامنے رہ کر) کس قدر کوتاہی کی ہے ۔
Advertisements

Please Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.